فضل الرحمٰن کی حکومت کو 2 دن کی مہلت 01 نومبر 2019

  • Posted by Mian Zahoor ul Haq
  • at 6:49:00 AM -
  • 0 comments
جمعیت علمائے اسلام ف کے امیر مولانا فضل الرحمٰن نے وزیر اعظم عمران خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ہے کہ آپ کو دو دن کی مہلت دیتے ہیں، استعفیٰ دے دیں، ورنہ پھر ہم نے اس سے آگے فیصلے کرنے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ہمارے اس امن کا احترام کیا جائے، مزید صبر و تحمل کا مظاہرہ نہیں کرسکیں گے۔
اسلام آباد میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے سربراہ جے یو آئی کا کہنا ہے کہ آج کشمیر یوں کو تنہا چھوڑ دیا گیا ہے، موجودہ حکمرانوں نے کشمیریوں کو مودی کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان کے عوام کشمیریوں کے لیے لڑیں گے ، ان کی خود مختاری اور آزادی کے لیے پاکستانی عوام لڑیں گے۔
فضل الرحمٰن نے کہا کہ ملکی معیشت تباہ ہوگئی ہے ، مہنگائی نے گھر کر لیا ہے، مائیں اپنے بچوں کو بیچنے پر مجبور ہیں، رکشے والے اپنے رکشے جلارہے ہیں ہم قوم کو ان نااہل حکمرانوں کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑ سکتے۔
انہوں نے کہا کہ انہیں مزدوروں ، غریبوں اور کسانوں کے ساتھ مزید کھیلنے کی اجازت نہیں دےسکتے، پچاس لاکھ گھر بنانے کی بات کی گئی تھی مگر پچاس ہزار سے زیادہ لوگوں کے گھر گرادیئے گئے ہیں۔
فضل الرحمان نے کہا کہ عمران خا ن نے ایک کروڑ نوکریوں کا وعدہ کیا تھا، مگر ایک لاکھ سے زیادہ لوگ بے روزگار ہوچکے ہیں، انہوں نے کہا تھا کہ لوگ باہر سے نوکریاں کرنے کے لیے آئے ہیں مگر باہر سے صرف دو لوگ نوکری کرنے آئے ہیں انہیں بھی آئی ایم ایف نے بھیجا ہے۔
سر براہ جے یو آئی نے کہا کہ ہم قرآن و سنت کی روشنی میں پاکستان کو بنائیں گے، روح قائداعظم پوچھ رہی ہے میر ا پاکستان کہاں ہے۔
فضل الرحمٰن نے کہا کہ پاکستان کی بنیاد مسلمانوں کی مدد کے لیے رکھی گئی تھی قائد اعظم نے 1948 میں فلسطینیوں کے حق میں آواز اٹھائی تھی اور مسلمانوں کے لیے ہی پاکستان کی خارجہ پالیسی بنائی گئی تھی، مگر آج پاکستان کی خارجہ پالیسی کچھ اور ہے۔
انہوں نے کہا کہ ہمیں مذہبی کارڈ استعمال کرنے کا کہا جاتا ہے ، مذہبی کارڈ پاکستان کے آئین میں موجود ہے آپ کون ہوتے ہیں ہمیں مذہب کی بات سے روکنے والے، اسلام ہے تو پاکستان ہے اور پاکستان کے ساتھ اسلام ہے ۔
فضل الرحمٰن نے کہا کہ وہ کہتے ہیں کہ ہم کرپٹ اور چوروں کے خلاف لڑرہے ہیں مگر ورلڈ اکنامک فورم کی رپورٹ کے مطابق پچھلے ایک سال میں کرپشن میں اضافہ ہوا ہے ۔
سر براہ جے یوآئی نے کہا کہ عمران خان تم چوروں کے سردار بنے ہوئے ہو ، دوسروں کو آئینہ دکھانے والوں اپنی شکل آئینے میں دیکھ لو ، آج پاکستان کا سب سے بڑا آزادی مارچ نکلا ہوا ہے مگر میڈیا پر پابندی لگائی ہوئی ہے ہمارے مارچ کے دکھانے پر ۔
انہوں نے کہا کہ میں میڈیا کے ساتھ کھڑا ہوں اور میڈیا پرسن و مالکان کے ساتھ میری ہمدردیاں موجود ہیں، ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ میڈیا سے پابندی فوراً اٹھالی جائے اگر پابندی نہیں اٹھائی تو پھر ہم بھی کسی چیز کے پابند نہیں رہیں گے۔
فضل الرحمٰن نے کہا کہ ہم پر امن لوگ ہیں اگر ہمیں تنگ کیا گیا تو یہ اتنا بڑا مجمعہ اتنی قدرت رکھتا ہے کہ وزیر اعظم کو اس کے گھر جاکر گرفتار کرسکتا ہے۔
سر براہ جے یو آئی نے کہا کہ عوام کا فیصلہ آچکا ہے ، ہم اداروں سے تصادم نہیں چاہتے، ہم اداروں کے ساتھ کھڑے ہوئے ہیں ، مگر ہم اداروں کو بھی غیر جانب دار دیکھنا چاہتے ہیں۔
Source-

Author

Written by Admin

Aliquam molestie ligula vitae nunc lobortis dictum varius tellus porttitor. Suspendisse vehicula diam a ligula malesuada a pellentesque turpis facilisis. Vestibulum a urna elit. Nulla bibendum dolor suscipit tortor euismod eu laoreet odio facilisis.

0 comments: